ٹریفک جام سے نجات کے لیے ارب پتی شخص کا منفرد حل

انسان چاہے امیر ہو یا غریب، ٹریفک جام ایسا مسئلہ ہے جو سب کو پریشان کرتا ہے مگر اس سے نجات پانے کی کوشش بہت کم لوگ کرتے ہیں، ایسا ہی کچھ لگ بھگ 2 سال قبل ایک ارب پتی شخص کے ساتھ بھی ہوا، مگر خاموش رہنے کی بجائے اس نے اس کا بالکل منفرد حل پیش کیا اور اب اس پر عملدرآمد بھی کرلیا۔

ٹیسلا اور اسپیس ایکس کے بانی ایلون مسک کا نام حیرت انگیز منصوبوں کے لیے نیا نہیں اور لاس اینجلس کے ٹریفک سے تنگ آکر انہوں نے زیرزمین سرنگ کا حل پیش کیا تھا اور 2 سال میں اسے مکمل بھی کرلیا۔

آغاز میں تو ایلون مسک کا سرنگ کے ذریعے اپنے دفتر جانے کا اعلان مذاق ہی محسوس ہوا تھا مگر اب وہ حقیقت کا روپ دھار چکا ہے۔

دسمبر 2016 میں ایلون مسک کی بورنگ کمپنی نے جس منصوبے پر کام شروع کیا، اسے گزشتہ روز کھول دیا گیا۔

1.4 میل طویل اس سرنگ کی چوڑائی 14 فٹ ہے اور اس پر ایک کروڑ ڈالرز کی لاگت آئی مگر اس میں لوگ شہر کے نیچے 155 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے سفر کرسکیں گے ۔

دیکھنے میں یہ سرنگ کسی ٹرین ٹریک جیسی ہے جو ایلون مسک کے مطابق روزانہ سفر کرنے والے لاکھوں افراد کی زندگیوں میں انقلاب برپا کردے گی۔

ایلون مسک کا اس سرنگ کے افتتاح کے موقع پر کہنا تھا کہ بورنگ کمپنیوں کی تیار کردہ سرنگیں درحقیقت روح کچل دینے والے ٹریفک کا اصل حل ہے۔

یہ سرنگ ایلون مسک کے گھر سے دفتر تک پھیلی ہوئی ہے تاکہ انہیں مستقبل میں کبھی ٹریفک جام کا سامنا نہ ہو۔

ویسے تو ٹریفک کے مسئلے کا حل سرنگیں کھود کر نکالنا کچھ عجیب لگتا ہے مگر ایلون مسک کے دیگر منصوبوں جیسے ہائپر لوگ یا مریخ تک انسان بردار مشن بھیجنے سے زیادہ عجیب نہیں۔

تاہم سرنگیں کھودنا تکنیکی لحاظ سے تو ممکن ہے مگر لاجسٹک لحاظ سے درد سر سے کم نہیں۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے