لڑکیوں کی شادی کی عمر 16 سال سے بڑھا کر 18 سال کرنے کا فیصلہ

میرج ایکٹ میں ترمیم کی سمری منظوری کے لیے وزیراعلی کو ارسال

لاہور( قافلہ نیوز ) حکومت نے کم عمری کی شادیاں روکنے کے لیے میرج ایکٹ میں ترمیم کا فیصلہ کرلیا،اس سلسلے میں حکومت پنجاب نے لڑکیوں کی شادی کی عمر 16 سال سے بڑھا کر 18 سال کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق میرج ایکٹ میں ترمیم کے لیے محکمہ بلدیات نے سمری منظوری کے لیے وزیراعلیٰ پنجاب کو ارسال کردی ہے، سمری کی منظوری کے بعد ترمیم کا مسودہ تیار کیا جائے گا، پنجاب اسمبلی سے منظوری کے بعد یہ نیا ترمیمی ایکٹ نافذ العمل ہوگا۔جس کے تحت لڑکیوں کی شادی کی عمر 16سال سے بڑھا کر 18سال مقرر کردی جاۓ گی۔
محکمہ بلدیات حکام کا کہنا ہے کہ شادی ایکٹ میں ترمیم کا فیصلہ ماں اور بچے کی صحت کے پیش نظر کیا گیا ہے، اس حوالے سے محکمہ ہیلتھ نے بھی شادی ایکٹ میں ترمیم کی سفارش کر رکھی ہے۔واضح رہے کہ جنوبی پنجاب میں وٹہ سٹہ کی رسم کی وجہ سے بچیوں کی کم عمر میں شادیوں کا رواج عام ہے۔کھیلنے کودنے اور پڑھنے لکھنے کی عمر میں بچیوں کو اہم سماجی بندھن میں باندھ دیا جاتا ہے۔کم علمی اور شعور نہ ہونے کی وجہ سے ایسی شادیاں ناکام رہتی ہیں جبکہ کم عمری میں مائیں بننے سے زچہ و بچہ کی شرح اموات بھی زیادہ ہے۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے