سرفراز احمد پر 4میچوں کی پابندی

پی سی بی نے قومی ٹیم کے کپتان کو واپس بلا لیا

ویب ڈیسک | 27جنوری 2019



آئی سی سی نے قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد پر 4میچ کھیلنے پر پابندی عائد کردی ہے۔انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹوئٹ میں یہ معلومات فراہم کیں، سرفراز احمد کو جنوبی افریقا کے خلاف دوسرے میچ کے دوران نسل پرستانہ جملا کہنے پر معطل کیا گیا ہے۔
سرفراز احمد کو آئی سی سی کے نسل پرستانہ کوڈ کی خلاف ورزی کرنے پر 4 میچوں کے لیے معطل کیا گیا ہے، یوں وہ جنوبی افریقا کے خلاف آخری ایک روزہ میچ میں بھی شریک نہیں ہوسکیں گے جب کہ وہ پروٹیز کے خلاف ابتدائی 2 ٹی ٹوئنٹی میں بھی قومی ٹیم کا حصہ نہیں ہوں گے۔ترجمان آئی سی سی ڈیو رچرڈسن کا کہنا تھا کہ آئی سی سی نسل پرستانہ فقرے بازی پرزیرو ٹولیرنس پالیسی رکھتا ہے اور سرفراز احمد نے غلطی کا اعتراف کرتے ہوئے سرعام معافی مانگی اس لیے ان پر کم سے کم سزا کا اطلاق ہوا جب کہ سرفراز کو نسل پرستی کیخلاف تعلیمی پروگرام میں بھی شرکت کرنا ہوگی۔

واضح رہے سرفراز احمد نے جنوبی افریقی کھلاڑی اینڈائل فیلوکایو سے نسل پرستانہ جملہ کہنے پر معافی مانگی تھی جس پر انہوں نے قومی ٹیم کے کپتان کو معاف بھی کردیاتھا۔
پاکستان کرکٹ بورڈ نے قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کو وطن واپس بلالیا۔
ادھر انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی جانب سے سرفراز احمد پر پابندی عائد کیے جانے کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے سرفرازاحمد کو فوری وطن واپس بلانے کا فیصلہ کر لیا اور انہیں دستیاب پہلی فلائٹ کے ذریعے جنوبی افریقہ سے پاکستان واپس بھجوایا جائے گا۔جنوبی افریقہ کے خلاف باقی ایک روزہ اور ٹی ٹونٹی سیریز میں کپتانی کے فرائض شعیب ملک انجام دیں گے اور سرفراز احمد کی جگہ رضوان احمد وکٹ کیپنگ کے فرائض انجام دیں گے۔
ادھرپی سی بی نے آئی سی سی کے فیصلے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ معاملے کو دونوں کھلاڑیوں اور کرکٹ بورڈز نے خوش اسلوبی سے طے کرلیا تھا، اس کے باوجود آئی سی سی کے اس فیصلے نے مایوس کیا ہے، پاکستان کرکٹ بورڈ کی طرف سے جاری پریس ریلیز کے مطابق پی سی بی یہ معاملہ آئی سی سی  فورم میں اٹھائے گا ۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے