27 فروری کو بھارت اور اسرائیل مل کر پاکستان پر حملہ کرنا چاہتے تھے:حکومتی ذرائع

بھارت کی جانب سےکراچی اوربہاولپورٹارگٹ تھے

ویب ڈیسک : پیر 04مارچ 2019
اسلام آباد : پاکستان کے انٹیلی جنس اداروں نے دشمن کے ناپاک عزائم کا بروقت سراغ لگا کراس کے تمام منصوبوں پر پانی پھیر دیا اور انٹیلی جنس اطلاعات کی بنیاد پر حملے کو ناکام بنا دیا گیا-
حکومتی ذرائع نے انکشاف کیا پاکستان پرحملےکی تیاریوں میں بھارت کیساتھ اسرائیل کی سازش بھی شامل تھی، بھارت نے راجستھان کے جانب سے حملے کا منصوبہ بنایاتھا، جس کے بعد پاکستان نےواضح پیغام دیا تھا حملہ کیاگیا تو منہ توڑ جواب دیاجائےگا۔
تفصیلات کے مطابق حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ 27 فروری کو بھارت اور اسرائیل پاکستان پر حملے کی منصوبہ بندی کررہے تھے، پاکستان کی انٹیلی جنس ایجنسیوں کو حملے کی تیاری کاعلم ہوگیا تھا، جس کے بعد پاکستان نے بتادیا تھا حملہ کیا توبھرپورجواب دیں گے۔
ذرائع کا کہنا تھا کہ بھارت نے پاکستان پر جنگ مسلط کرنے کی کوشش کی تھی، جنگ مسلط کرنے کی کوشش میں بھارت کیساتھ اسرائیل اورایک اور ملک بھی شامل تھا۔
حکومتی ذرائع کے مطابق بھارت نے راجستھان کے جانب سے حملے کا منصوبہ بنایاتھا، اطلاعات کے بعد پاکستان نے بھارتی منصوبہ بندی سے متعلق بھارت کوآگاہ کیاتھا اور حملے کی منصوبہ بندی کا علم ہونے کے بعد ایئراسپیس بند کردی تھی اور پاکستان کی جانب سےطیارےگرانےکےبعدواضح پیغام دیاگیا کہ حملہ ہوا تو منہ توڑجواب دیاجائےگا۔
ذرائع نے بتایا اسرائیل کی کوشش ہے پاکستان براہ راست ان سےبات کرے، اسرائیل کی کوشش ہےپاکستان کےایٹمی اثاثوں کونقصان پہنچایاجائے، فلسطین میں اسرائیلی مظالم کی صورت میں بات نہیں کی جاسکتی۔
حکومتی ذرائع کا کہنا تھا بالاکوٹ میں بھارتی دراندازی کے بعد پاکستان نےصبروتحمل کامظاہرہ کیا، اگلے روز دوبارہ دراندازی کی صورت میں واضح جواب دیاگیا جبکہ پاکستان کی جانب سے بھارتی پائلٹ کی رہائی کےاقدام کوعالمی سطح پر سراہا گیا۔
ذرائع نے بتایا پاکستان مختلف تنظیموں کو غیر مسلح کرکے قومی دھارے میں شامل کرنے کا فیصلہ کرچکا ہے ، بھارت کی جانب سے پلواماحملوں کے ڈوزیئر میں کوئی ایکشن ایبل ثبوت نہیں، پلواماحملےمیں کوئی نان اسٹیٹ ایکٹرتک شامل نہیں تھا۔
حکومتی ذرائع نے کہا بھارت کی پلواماحملےکراکےملبہ پاکستان پرڈالنےکی منصوبہ بندی تھی، عالمی برادری نےکشیدگی کم کرنےمیں پاکستان کے کردار کی تعریف کی اور عالمی سطح پرپاکستان کاامیج بہترہورہاہے۔
ذرائع کا کہنا تھا کہ راجستھان کےراستےپاکستان پرحملےکیساتھ میزائل حملوں کابھی منصوبہ تھا، میزائل حملوں میں پاکستان کے 8 سے 9 مقامات کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی تھی، پاکستان کی جانب سے بھی جواباً9 سے زائد مقامات کو ٹارگٹ کرلیاگیا تھا۔
حکومتی ذرائع نے کہا پاکستان کو دشمن کےناپاک عزائم کی انٹیلی جنس معلومات مل چکی تھیں، پاکستان کوبعض دوست ممالک نے بھی انٹیلی جنس معلومات فراہم کیں۔
ذرائع نے مزید کہا بھارت پاکستان کےایئربیسز کونشانہ بنانےکی منصوبہ بندی کررہاتھا بھارت کی جانب سےکراچی اوربہاولپورٹارگٹ تھے، بھارت کیساتھ اسرائیل اورایک عالمی طاقت بھی شامل تھی۔
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے نجی ٹی وی چینل ‘جیو نیوز’ کے پروگرام ‘کیپیٹل ٹاک’ میں بات کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کا پاکستان کے 5 سے زائد مقامات پر حملہ کرنے کا منصوبہ تھا جس کی ہمیں پیشگی اطلاع ملی تھی۔ لیکن ہماری افواج کے الرٹ ہونے، پکی انٹیلی جنس معلومات ہونے اور سفارتی و ملٹری روابط نے بھارت کو حملے سے روکنے میں کردار ادا کیا۔’
ان کا کہنا تھا کہ 26 فروری کو بھارت نے پاکستان پر جارحیت کی پہلی کوشش اوکاڑہ اور بہاولپور کی طرف سے کی اور بھارتی جہازں کی فارمیشن نے پاکستان میں داخل ہونے کی کوشش کی لیکن، پاک فضائیہ نے انہیں پیچھے دھکیلا اور واپس جانے پر مجبور کیا۔
شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارت نے دوسری کوشش لاہور سیالکوٹ سرحد کی طرف سے کی، دوبارہ پاک فضائیہ کے طیاروں نے انہیں پیچھے دھکیلا، جبکہ تیسری بڑی فارمیشن نے مظفر آباد ایل او سی کی طرف سے پاکستان میں داخل ہونے کی کوشش کی جس میں کچھ جہاز واپس لوٹ گئے لیکن ایک جتھا پاکستان میں 4 سے 5 نوٹیکل مائیلز اندر آیا اور کارروائی کی اور جب ہمارے جہاز ان کے پیچھے گئے تو وہ بھی واپس لوٹ گئے۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان نے پھر دوسرے روز جواب دیا اور بھارت کے 2 طیارے گرائے۔
انہوں نے کہا کہ ‘اس صورتحال میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے بہت متحرک کردار ادا کیا، انہوں نے اپنی صلاحیتوں کا اظہار کیا اور ان کی صلاحیتیں نظر بھی آئیں۔’
واضح رہے کہ میڈیا رپورٹس میں ذرائع کے ذریعے یہ بات سامنے آئی تھی کہ پاکستان کی جوابی کارروائی پر بھارت تلملا اٹھا اور اس نے پاکستان کے 6 سے 7 ایئر بیسز کو نشانہ بنانے کا منصوبہ بنایا لیکن پاکستان کے خفیہ ادارے نے اس منصوبے کا بروقت پتہ چلا لیا۔اس کے بعد پاکستان نے دوست ممالک کے ذریعے بھارت کو پیغام بھیجا کہ اگر حملہ کیا تو ہمارا جواب تین گنا زیادہ طاقت ور ہوگا، تب جا کر بھارت اس منصوبے سے باز آیا۔
ذرائع کا کہنا تھا کہ بظاہر ایل او سی پر کشیدگی کم ہوگئی ہے لیکن پاکستان کے کچھ شہر بھارت کے ہدف پر ہیں، ہو سکتا ہے وہ اب بین الاقوامی سرحد عبور نہ کرے بلکہ کوئی دہشت گرد حملہ کرا سکتا ہے، بھارت کچھ شہروں میں دہشت گرد حملے کرنا چاہ رہا ہے جس کی پاکستان کی جانب سے دوست ممالک اور عالمی طاقتوں کو بھی اطلاع دے دی گئی ہے‘۔
واضح رہے 27 فروری کو پاکستان نے فضائی حدود کی خلاف ورزی پر بھارت کےدو طیارے مارگرائے تھے اور پائلٹ ابھی نندن کوگرفتارکرلیا تھا، جس کے بعد بھارت نے بھی طیاروں کی تباہی اور پائلٹ لاپتہ ہونے کا اعتراف کیا تھا۔
ڈی جی آئی ایس پی آر نے بتایا تھا بھارتی طیارے پاکستانی حدود میں نشانہ بنائے، ایک طیارہ آزاد کشمیر دوسرا مقبوضہ کشمیر کی حدود میں گرا تھا۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے