مہنگائی کا طوفان ہے مگر حکومت ٹس سے مس نہیں ہورہی:لاہورہائیکورٹ

ویب ڈیسک | 04اپریل2019

لاہور : لاہورہائیکورٹ کے جسٹس امیربھٹی نے ریمارکس دیئے ہیں کہ ملک میں مہنگائی کا طوفان ہے مگرحکومت ٹس سے مس نہیں ہورہی۔ آئے روز دوسرے ممالک کے سربراہان کو بلا کر اربوں روپے وصول کیے جاتے ہیں ، پٹرول پر ٹیکس ،ڈالر کی قیمت بڑھتی جارہی ہے ،انتظامیہ ناکام ہوگئی،عوام کوکوئی ریلیف نہیں دیا جارہا۔ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس امیر بھٹی نے حکومت کی جانب سے ٹھیکیداروں اعجاز احمد ودیگر کو سرکاری سکول اور نیشنل ہائی ویز کی تعمیر کے باوجود معاوضہ ادا نہ کرنے کیخلاف کیس کی سماعت کی ۔جسٹس امیربھٹی نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا حکومت آئے روز کسی نہ کسی ملک کے سربراہ کو بلاکر اربوں روپے مانگتی ہے ، اربوں روپے وصول تو کرلیتی ہے لیکن یہ پیسے جاتے کہاں ہیں،روزبروز ڈالر کی قیمت بڑھتی جا رہی ہے ۔کبھی پٹرول پر ٹیکس بڑھا دیا جاتا ہے ، مزید مہنگائی کردی گئی ہے ۔ حکومت نام کی چیز نہیں ، یہاں انتظامیہ فیل ہوچکی ہے اور عوام مہنگائی میں پس ر ہے ہیں۔ پہلے بھی یہی سسٹم تھا لیکن غیر یقینی کی صورتحالاتنی نہیں تھی۔جسٹس امیر بھٹی نے کہا عوام مہنگائی میں پس رہی لیکن حکومت کو کوئی سروکار نہیں اور کچھ نہیں ہو سکتا تو کم از کم ڈالر کو ہی روک لیں، عوام کو کچھ ریلیف نہیں مل رہا ،حکومت میں آنیاں جانیاں لگی ہوئی ہیں۔ حکومت ٹھیکیداروں سے کام کروالیتی لیکن پیسے نہیں دیتی۔ بظاہر حکومت ٹھیکیداروں سے فراڈ کررہی ہے اور عوام سے فراڈ برداشت نہیں کرینگے ۔سارا ہائیکورٹ اسی کام پر لگا ہوا ہے کہ ٹھیکیداروں کو پیسے لیکر دیں ،کوئی سرکاری افسر کام نہیں کررہا ۔فنانس سیکرٹری پنجاب نے عدالت کو بتایا کہ ہم ٹیکس کے طے شدہ اہداف حاصل نہیں کر پائے ،پنجاب میں 100ارب روپے کی کمی کا سامنا ہے ۔ جسٹس امیر بھٹی نے کہا پھر چیف سیکرٹری کو بلالیتے ہیں ،دیکھتے ہیں سب کیسے ٹھیک نہیں ہوسکتا ۔نااہل سرکاری افسروں کی وجہ سے عدالتوں پر مقدمات کا بوجھ بڑھ گیا ہے ۔ کوئی سرکاری افسر ملازمین اور شہریوں کی شنوائی نہیں کرتا ،کیا آپ کو پتا ہے ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفیسر کیا کررہا ہے ؟ آمدن کتنی اور اثاثے کتنے ہیں ؟جائیں جاکر چیک کریں ،پتا نہیں ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفیسر کی کمیشن کتنی اوپر تک جاتی ہے ۔ فنانس سیکرٹری پنجاب نے کہا ٹھیکیداروں کو دینے کیلئے پیسے موجود ہیں لیکن طریقہ کار میں پیچیدگیوں کے باعث ادائیگیوں میں تاخیر ہوئی ۔جسٹس امیر بھٹی نے کہاچیف سیکرٹری سے کہیں ہائیکورٹ میں فوکل پرسن مقرر کریں ۔عدالت نے تعمیرات کرنیوالے ٹھیکیداروں کو 15روز میں ادائیگیاں کرنے کا حکم دیدیا اور سیکرٹری فنانس سے عملدرآمد رپورٹ طلب کر لی۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے