وفاقی کابینہ نے کالا دھن سفید کرنے کی ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کی منظوری دے دی

ویب ڈیسک : منگل 14مئی 2019

اسلام آباد: وفاقی کابینہ نے ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کی منظوری دے دی جس کے مطابق صرف چار فیصد ٹیکس دے کر کالے دھن کو سفید کیا جاسکے گا۔
قافلہ نیوزکے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں ایمنسٹی اسکیم پر بریفنگ دی گئی۔
وفاقی کابینہ نے کالا دھن سفید کرنے کی اجازت سے متعلق ایمنسٹی اسکیم کیلئے ایسٹ ڈیکلیئریشن آرڈیننس 2019 کی منظوری دے دی۔ ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کا باضابطہ اعلان کیا جائے گا اور صدارتی آرڈیننس کےذریعے اسے کو نافذ کیا جائے گا۔
اسکیم کے مطابق پاکستان میں اثاثے ظاہر کرنے پر چار فیصد ٹیکس دینا ہوگا اور بیرون ملک اثاثے 6 فیصد ٹیکس کی ادائیگی پر ظاہر کئے جا سکیں گے۔اجلاس میں کابینہ کوملکی موجودہ نظام تعلیم سے متعلق بھی بریفنگ دی گئی جب کہ مدارس کوقومی دھارے میں لانے سے متعلق پیش رفت کا بھی جائزہ لیا گیا۔
وفاقی کابینہ نے چین کی جانب سے انسداد منشیات کے لیے عطیہ کردہ سامان پرڈیوٹی کی چھوٹ کے معاملہ پر بھی غور کیا اور نیشنل اسکول آف پبلک پالیسی اورمصرکے نشینل مینجمنٹ انسٹی ٹیوٹ کے درمیان مفاہمتی یادداشت کی منظوری بھی دی گئی۔
کابینہ اجلاس میں اضافی حج کوٹے جبکہ کراچی اورکوئٹہ کی خصوصی عدالت برائے انسداد منشیات کے ججوں کی تعیناتی کی بھی منظوری دی گئی۔
کابینہ کی جانب سے قومی ائیرلائین کے چارٹراورائیریل ورک لائسنس کی تجدید پرغور کیا گیا اوربیرون ملک قید پاکستانیوں کو قونصلر رسائی پالیسی کے معاملہ پر بھی گفتگو کی گئی۔
میڈیا رپورٹس کے مطابق کابینہ کی جانب سے ایمنسٹی اسکیم کی منظوری کے بعد صدارتی آرڈیننس کے ذریعے ایمنسٹی اسکیم نافذ کردی جائے گی۔
ایمنسٹی اسکیم کے تحت چار فیصد ٹیکس ادا کرکے اثاثے ظاہر کیے جا سکیں گے جبکہ جن لوگوں کے اثاثہ بیرون ملک ہیں وہ 6 فیصد ٹیکس دیکر ان کو ریگولرائز کراسکتے ہیں۔وزیراعظم کواشیائے خور و نوش، موجودہ نظام تعلیم کے حوالے سے بھی بریفنگ کابینہ کے ایجنڈے کا حصہ تھی ۔کابینہ اجلاس میں مدارس کو قومی دھارے میں لانے سے متعلق اب تک کی پیش رفت کا بھی جائزہ لیا جانا تھا۔بیرون ملک قید پاکستانیوں کو قونصلر رسائی پالیسی کا معاملہ بھی اجلاس کے ایجنڈے میں شامل ہے۔ وفاقی کابینہ کو قومی ائیر لائین کے چارٹر اور ائیریل ورک لائسنس کی تجدید پر بھی غور کرنا تھا۔کراچی اور کوئٹہ کے خصوصی عدالت برائے انسداد منشیات کے ججوں کی تعیناتی کا معاملہ بھی وفاقی کابینہ کے ایجنڈے میں شامل تھا۔وفاقی کابینہ نے چین کی جانب سے انسداد منشیات کے لیے عطیہ کردہ سامان پر ڈیوٹج کی چھوٹ کے معاملے پر بھی غور کرنا تھا۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے