سرگودھا: بجلی چوری کرنے والا اسسٹنٹ کمشنر پکڑا گیا

اسسٹنٹ کمشنر بھیرہ کے گھر میں چار ایئرکنڈیشنرز مبینہ طور پر چوری کی بجلی سے استعمال کیے جارہے تھے

ویب ڈیسک : 21مئی 2019
لاہور،سرگودھا: چوری کی بجلی استعمال کرنے والا اسسٹنٹ کمشنر پکڑا گیا۔ ملزم گھر میں چوری کی بجلی سے مبینہ طور پر چار ایئرکنڈیشنرز استعمال کررہا تھا۔
میڈیا رپورٹس کے مطابق واپڈا کے بھلوال سرکل کی ٹاسک ٹیم نے چھاپہ مارکر اسسٹنٹ کمشنر واثق عباس کے گھر کھمبے سے براہ راست جانے والی مبینہ تاریں قبضے میں لے لی ہیں۔
واپڈا کے ذمہ دار ذرائع نے بتایا کہ ملزم اسسٹنٹ کمشنر بھیرہ کے گھر میں چار ایئرکنڈیشنرز مبینہ طور پر چوری کی بجلی سے استعمال کیے جارہے تھے۔
ذرائع کے مطابق واپڈا کی ٹیم نے جب چھاپہ مار کرغیرقانونی طور پرلگائی جانے والی تاریں قبضے میں لیں تو ملزم اسسٹنٹ کمشنر منت سماجت پہ اتر آیا اور ساتھ ہی اقرار کیا کہ اپنی تعیناتی سے لے کر آج تک وہ چوری کی بجلی استعمال کرتا آیا ہے۔
واپڈا کی قائم کردہ ’ٹاسک ٹیم‘ ملزم کی داد فریاد کو یکسر نظرانداز کرتے ہوئے غیرقانونی طور پرلگائی جانے والی تاریں اور گھر میں نصب میٹر دونوں اتار کر قبضے میں لے لیے۔
واپـڈا کے ذرائع نے بتایا کہ ملزم کے خلاف تھانہ بھیرہ میں ٹاسک ٹیم کی جانب سے باقاعدہ مقدمہ کے اندراج کے لیے درخواست دے دی گئی ہے-بجلی چوری کی وجہ سے لائن لاسز میں اضافہ ہوتا ہے جس کا خمیازہ عام افراد بھاری بلوں کی ادائیگی کی شکل میں بھرتے ہیں۔

وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان نے اپریل 2019 میں کہا تھا کہ بجلی چوروں کے خلاف کارروائی کی جارہی ہے اور اس ضمن میں اب تک 400 سے زائد افراد کو برطرف جب کہ 30 ہزار سے زائد ایف آئی آرز درج کی گئی ہیں۔جنوری 2019 میں وفاقی وزیر برائے توانائی عمر ایوب خان نے ذرائع ابلاغ سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ پشاور، کوئٹہ، حیدرآباد اور سکھر ریجنز میں سب سے زیادہ بجلی چوری ہوتی ہے۔
ستمبر 2018 میں وفاقی وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی کے حکام نے دعویٰ کیا تھا کہ بجلی چوری کی روک تھام کے لیے آرٹی فیشنل انٹیلی جنس کی مدد سے کام کرنے والی جدید ’ٹیکنالوجی‘ تیار کر لی گئی ہے۔
اس وقت سینیٹر روبینہ خالد کی زیرصدارت منعقدہ سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے آئی ٹی اور ٹیلی کام کے اجلاس کو آئی ٹی حکام نے بتایا تھا کہ بجلی چوری کی روک تھام کے لیے تیار کی جانے والی جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے 90 فیصد لائن لاسز اور بجلی کی چوری روکی جا سکتی ہے۔شرکائے اجلاس کو انفارمیشن ٹیکنالوجی کے حکام نے بتایا تھا کہ نئی ٹیکنالوجی ایک چپ کی مدد سے کام کرے گی جو میٹر میں خفیہ طور پر نصب ہو گی۔حکام نے اجلا س میں دعویٰ کیا تھا کہ اس ٹیکنالوجی کا تجربہ ایم ای ایس پشاور اور ایم ای ایس راولپنڈی میں کیا گیا جس سے ایک سال میں 35 فیصد بجلی چوری روکنے میں کامیابی ملی ہے۔
ادھر لیسکو میں بجلی چوری کروانے میں ملوث دو ایس ڈی اوز سمیت متعدد ملازمین کو معطل کرنے کے احکامات جاری کر دیئے گئے۔
نوٹیفکیشن کے مطابق ایس ڈی او بلال کالونی سب ڈویژن عاشق علی اور ایس ڈی او کوٹ خواجہ سعید سب ڈویژن محمد ارشد کو معطل کردیا گیا ہے۔ دوسری جانب لائن سپرنٹنڈنٹ رحمان پورہ سب ڈویژن عبدالرحمان، لائن سپرنٹنڈنٹ کینٹ ڈویژن آصف شاہ اور فیڈر انچارج انگوری باغ آصف علی بھی معطل ہونے والوں میں شامل ہیں۔
واضح رہے کہ دو روز قبل فیسکو چیف مجاہد اسلام بااللہ کی ٹیم نے لاہور میں بجلی چوری کروانے والے گینگ کے سرغنہ رنگے ہاتھوں پکڑا تھا، سرغنہ کی نشاندہی پر لیسکو نے ملوث افسران و ملازمین کو معطل کر دیا ہے، ملازمین گینگ کے ساتھ ملکر وسیع پیمانے پر بجلی چوری کروانے میں ملوث تھے۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے