رحیم یارخان میں 5سال کے دوران730زندگیاں ٹریفک حادثات کی نذر ہوگئیں

حادثات میں59ہزار 496افراد متاثر ہوئے

ویب ڈیسک : بدھ 22مئی 2019

صادق آباد : ریسیکو 1122 نے ضلع رحیم یارخان میں پچھلے 5سال کے دوران پیش آنے والے ٹریفک حادثات کے اعداد و شمار پر مبنی رپورٹ جاری کردی جس کے مطابق صادق آباد کے جمالدین والی روڈ، ہسپتال روڈ ،ٹلو روڈ،منٹھار روڈ،چونگی نمبر 12،ایف ایف سی گوٹھ ماچھی چوک،بسم اللہ سی این جی چوک،تاج چوک احمدپورلمہ روڈ،رحیم یارخان صادق آباد ائیرپورٹ روڈ،جمالدین والی بائی پاس کو حادثات کے حوالے سے بلیک سپاٹ قرار دیا گیا ہے۔ریسکیو 1122کی رپورٹ کے مطابق پچھلے پانچ برسوں میں ضلع بھر میں موٹر سائیکل کے 49 ہزار سے زائد حادثات رونما ہوۓ۔ کار کے چار ہزار 813 جبکہ بسوں کے 525، ٹرک کے 194، وین 125 حادثات پیش آئے۔ 4536 رکشے بھی حادثات کا سبب بنے جبکہ 7260 دیگر ذرائع بھی ٹریفک حادثات کی بڑی وجہ بنے۔

پچھلے پانچ برسوں کے دوران ٹریفک حادثات میں59ہزار 496افراد متاثر ہوئے جن میں730افراد جان کی بازی ہار گئے۔ حادثات سے متاثرہ 17ہزار668افراد کو موقع پر ہی فرسٹ ایڈ دی گئی جبکہ41098 شدید زخمی افراد کو ہسپتالوں میں شفٹ کیا گیا۔ 27ہزار 223ٹریفک حادثات تیز رفتاری کی وجہ سے پیش آۓ۔ 14 ہزار سے زائدٹریفک حادثات کی وجہ غفلت اور لاپرواہی سے گاڑی یا موٹرسائیکل چلانا بنی۔ضلع بھر میں سڑکوں کی ٹوٹ پھوٹ کے باعث2611 حادثات رونما ہوۓ۔سفریا ڈرائیونگ کے دوران موبائل فون کے استعمال کی وجہ سے پیش آنے والے روڈ ایکسیڈنٹس کی تعداد147رہی۔
141 حادثات اچانک لائن بدلنے اور 101 حادثات رانگ سائیڈ پر آنے کے باعث رونما ہوۓ۔ 637 حادثات کی وجہ ٹرن لینا تھی جبکہ 104 گاڑیوں کے ٹائر برسٹ ہونے کے ساتھ ساتھ 61 دیگر وجوہات حادثات کا سبب بنیں۔ ریسکیو 1122کی جائزہ رپورٹ کے مطابق61 فیصدحادثات اوور سپیڈنگ اور 31 فیصد دوران ڈرائیونگ عدم توجہ کے باعث ہوئے۔ یوں 92 فیصد حادثات ان دو وجوہات کہ بنا پر ہوئے جن کو کنٹرول کرنا ہمارے اپنے اختیار میں ہے۔رحیم یارخان تاخان پور روڈ سہجہ موڑ پر المناک حادثات رونما ہوۓ۔قومی شاہراہ پر بھی ٹریفک حادثات میں اضافہ ہوا۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے