پاک بھارت ٹاکرا:کیا شاہین تاریخ بدل پائیں گے؟

ٹیم کا مورال بلند ہے، میچ جیتنے کی کوشش کریں گے،سرفراز احمد

ویب ڈیسک : اتوار 16جون 2019

مانچسٹر: پاکستان اور بھارت کی ٹیمیں عالمی کپ کے مقابلوں میں ایک مرتبہ پھر آج ٹکرائیں گی، میچ پاکستانی وقت کے مطابق دن 2:30 بجے مانچسٹر کے اولڈ ٹریفرڈ میدان پر کھیلا جائے گا۔دنیائے کرکٹ کا سب سے بڑا سمجھے جانا والا یہ مقابلہ ماضی کے تمام عالمی کپ میں بھارت کے حق میں تقریباً یک طرفہ ہی ثابت ہوا ہے۔
روایتی حریفوں کا پہلا مقابلہ 1992 میں ہوا، بھارت نے اس میچ میں پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 216 رنز بنائے تاہم عظیم کرکٹر سچن ٹنڈولکر کی آل راؤنڈ کارکردگی کے باعث پاکستان کو 43 رنز سے شکست ہوئی۔
1996 کے عالمی کپ میں پاکستان بھارت کے مقابلے میں فیورٹ ٹیم سمجھے جاتی تھی، اس ٹیم میں پاکستان کی تاریخ کے بہترین کھلاڑی موجود تھے، گیند بازی کی بات کی جائے تو وقار یونس، وسیم اکرم، مشتاق احمد اور عاقب جاوید اس وقت دنیائے کرکٹ پر راج کر رہے تھے۔بلے بازی کی بات کی جائے تو عامر سہیل، سعید انور کی جوڑی کرکٹ سب سے بہترین سلامی جوڑی سمجھی جاتی تھی، مڈل آرڈر میں پاکستان کو انضمام الحق، اعجاز احمد اور لیجنڈری جاوید میاں داد کی خدمات حاصل تھیں۔اس میچ میں بھارت نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے ایک بڑا ہدف پاکستان کے خلاف کھڑا کر دیا، 290 رنز کا ہدف عبور کرنے کے بعد پاکستان سیمی فائل کے لئے کوالیفائی کر سکتا تھا ۔سعید انور اور عامر سہیل کی سلامی جوڑی نے پاکستان کو بہترین آغاز فراہم کیا دونوں نے پہلی وکٹ کے لئے 84 رنز کی شراکت داری قائم کی تاہم عامر سہیل کی وکٹ گرنے کے بعد قومی ٹیم کے بلے باز ریت کی دیوار ثابت ہوئے اور بھارت نے پاکستان کو شکست دے دی۔
وسیم اکرم کی قیادت میں 1999 کے عالمی کپ میں اترنے والی پاکستان کی ٹیم بھی کوئی خاطر خواہ کارکردگی نہ دکھا سکی اور اس میچ میں بھی بھارت نے پاکستان کو 47 رنز سے شکست دی۔2003 میں وقار یونس کی قیادت میں اترنے والی قومی ٹیم سعید انور کی سنچری کی بدولت 273 رنز کا بڑا ہدف دینے میں تو کامیاب ہو گئی مگر سچن ٹنڈولکر اور وریندر سہواگ کی بلے بازی نے میچ کا رخ بدلتے ہوئے قومی ٹیم کو شکست دے دی۔2011 میں شاہد آفریدی کی قیادت میں کھیلنے والی پاکستانی ٹیم نے عالمی کپ میں بہترین کھیل کا مظاہرہ کیا اور سیمی فائنل تک رسائی حاصل کی مگر ٹاکرا بھارت سے ہوا اور اس میچ میں بھی پاکستان کو شکست کا سامنا کرنا پڑا۔مصباح الحق کی قیادت میں 2015 کے عالمی کپ میں کھیلنے والی پاکستان کی ٹیم بھی بھارت کو شکست نہ دے سکی۔
بھارت سے چھ شکستوں کا بدلہ لینے کے لئے کل سرفراز الیون ممکنہ طور پر بارش سے متاثر ہونے والے میچ میں کوہلی الیون کے خلاف میدان میں اترے گی۔
کرکٹ کے پنڈت بھارت کو اس میچ میں فیورٹ قرار دے رہے ہیں تاہم دوسری جانب گرین شرٹس تاریخ بدلنے کو تیار دکھائی دے رہی ہے۔
قومی ٹیم کے کھلاڑیوں نے ورلڈکپ کے اہم ٹاکرے سے قبل خوب پریکٹس کی، شاہینوں نے اپنے پنجے تیز کیے اور تربیتی کیمپ کے بعد میچ کے حوالے سے تاثرات پیش کیے۔قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کا کہنا تھا کہ بہت اہم میچ ہے،ٹیم کامورال بہت بلند ہے، ہم اچھی کارکردگی سےمیچ جیتنےکی بھرپورکوشش کریں گے۔
آل راؤنڈر محمد حفیظ کا کہنا تھا کہ ہم سب تیار ہیں،ان شااللہ قومی ٹیم میچ جیتےگی، فاسٹ باؤلر وہاب ریاض کا کہنا تھا کہ اب تک فارم اچھی جارہی ہے ،مزید اچھی کارکردگی دکھائیں گے۔
فخرزمان کا کہنا تھا کہ میچ میں بہترین کارکردگی دکھانےکی کوشش کروں گا جبکہ شعیب ملک کا کہنا تھا کہ بھارت کےخلاف میچ میں کسی قسم کاپریشرنہیں لےرہا۔ نوجوان آل راؤنڈر حسن علی کا کہنا تھا کہ بہت بڑامیچ ہے، اہم مقابلےکےلئےپرجوش ہوں اور بھرپور کارکردگی دکھانے کی کوشش کروں گا۔
قبل ازیں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ہیڈ کوچ مکی آرتھر کا کہنا تھا کہ ’’بھارت کے خلاف میچ تمام کھلاڑیوں کے لیے اہم ہے، جو کارکردگی دکھائے گا شائقین اُسے یاد رکھیں گے”۔
آسٹریلیا کے خلاف دھواں دار کارکردگی دکھانے والے فاسٹ باؤلر وہاب ریاض نے پراعتماد انداز میں کہا کہ میری فارم اچھی جارہی ہے جس کو جاری رکھنے کی کوشش کروں گا اور جس کی وجہ سے کامیابی مل رہی ہے اسی کو جاری رکھوں گا اور میری ٹیم کے لیے اچھے سے اچھا کروں گا۔
اوپنر فخر زمان کا کہنا تھا کہ کوشش کروں گا کہ اپنی ٹیم کے لیے رنز کرسکوں جس کے لیے محنت جاری ہے۔
آل راؤنڈر عماد وسیم نے کھلاڑیوں کے تاثرات بیان کرتے ہوئے کہا کہ لڑکے پرجوش ہیں تاہم گزشتہ میچ میں ناکامی کے باعث تھوڑے مایوس ہوئے تھے۔
آل راؤنڈر نے کہا کہ ہم کھیلنا چاہتے ہیں اور کوشش کریں گے کہ اچھے سے اچھا پرفارم کریں۔
اوپنر امام الحق نے بھارت سے جیتنے کا یقین لیے کہا کہ کوشش یہی کر رہے ہیں کہ دباؤ میں نہ کھیلیں، جو ہمیں آتا ہے وہ بلاخوف کرکے دکھائیں۔امام الحق نے کہا کہ اس ٹیم میں وہ یقین ہے کہ ہم کرسکتے ہیں اور ان شااللہ ہم اس کو ثابت کریں گے۔
قومی ٹیم کے مستند بلے باز بابراعظم بھی بھارت کو شکست دینے کے لیے پرعزم ہیں اور ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان میچ شروع سے ہی جذباتی ہوتا ہے کیونکہ پوری دنیا اس میچ کو دیکھتی ہے، دباؤ کچھ نہیں ہے بس اپنے آپ پر یقین اور ٹیم پر اعتماد ہے اور امید ہے سب اچھا ہوگا۔

میچ کیلئے پاکستانی اسکواڈ کا اعلان

بھارت کےخلاف میچ میں پاکستان نے13کھلاڑیوں کا اعلان کردیا ہے، شاداب خان اورعماد وسیم تیرہ کھلاڑیوں میں شامل ہیں جبکہ آصف علی کی جگہ عماد وسیم ٹیم کا حصہ ہوسکتے ہیں، اس کے علاوہ شاہین فریدی کی جگہ شاداب خان کی شمولیت کا امکان ہے۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے