پولیس تشدد،ڈی پی او رحیم یارخان کو عہدے سے ہٹا دیا گیا

صلاح الدین پولیس تشدد کیس،جوڈیشل انکوائری کی سماعت 7ستمبر کو ہوگی

ویب ڈیسک | 05ستمبر2019
لاہور: وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے رحیم یار خان پولیس کے ہاتھوں بدترین تشدد سے ہلاک ہونے والے صلاح الدین کے معاملے پر جوڈیشل کمیشن بنانے کیلئے لاہور ہائیکورٹ کو خط لکھ دیا ہے جبکہ ذرائع نے بتایا ہے کہ وزیراعلی کے حکم پر ڈی پی او رحیم یارخان عمرفاروق سلامت کو بھی عہدے سے ہٹادیا گیا۔
تفصیلات کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے رحیم یار خان میں پولیس کے ہاتھوں بدترین تشدد سے ہلاک ہونے والے گوجرانوالہ کے رہائشی صلاح الدین کے معاملے پر جوڈیشل کمیشن بنانے کیلئے لاہور ہائیکورٹ کو خط لکھ دیا ہے۔تازہ ترین اطلاعات کے مطابق صلاح الدین کی پولیس تشدد سے ہلاکت پر ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر رحیم یارخان عمرفاروق سلامت کو بھی تبدیل کردیا گیا ہے جبکہ ایس پی انوسٹی گیشن حبیب اللہ خان کو ایڈیشنل ڈی پی او کا چارج سونپ دیا گیا ہے۔
خیال رہے کہ ملزم صلاح الدین کو اے ٹی ایم مشین سے پیسے چوری کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔
ادھر صلاح الدین کی ہلاکت کے معاملے پر ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج رحیم یار خان نے سینئر سول جج شیخ فیاض حسین کو جوڈیشل انکوائری آفیسر مقرر کردیا ہے۔
ذرائع کے مطابق اس سلسلے میں پولیس افسر، ایس ایچ او، تفتیشی آفیسر اور مقتول کے والد کو نوٹس جاری کر دیے گئے ہیں۔ جوڈیشل انکوائری کی سماعت سات ستمبر کو ہوگی۔
ادھر قائمہ کمیٹی برائے سینیٹ مصطفی نواز کھوکھر نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی پنجاب اور ڈی پی او رحیم یار خان کو 12 ستمبر کو طلب کر لیا ہے۔
چیئرمین قائمہ کمیٹی نے وزارت انسانی حقوق سے بھی پولیس تشدد کے معاملے پر رپورٹ طلب کرتے ہوئے ہدایت جاری کی ہے کہ آئی جی پنجاب اور ڈی پی او رحیم یار خان ذاتی حیثیت میں پیش ہو کر صلاح الدین کے معاملے کی تحقیقات سے آگاہ کریں۔اس کے علاوہ وفاقی وزارت انسانی حقوق سے بھی پولیس تشدد کی روک تھام کیلئے قانون سازی پر رپورٹ طلب کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ بتایا جائے اس پر کیا پیش رفت ہوئی ہے۔مصطفیٰ نواز کھوکھر کا کہنا تھا کہ ایک سال سے وزارت انسانی حقوق کو قانون سازی کیلئے کہہ رہے ہیں۔ پنجاب پولیس سٹیٹ بنا ہوا ہے، آئے دن شہری حراست میں مارے جا رہے ہیں۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے