نصرت فتح علی خان کے سُروں کا سحرآج بھی سرچڑھ کر بول رہا ہے

ویب ڈیسک : 13اکتوبر2019
لاہور: استاد نصرت فتح علی خان کی 71 ویں سالگرہ آج منائی جارہی ہے،نامور قوال کے جنم دن کے موقع پر ان کے چاہنے والے ان کو مختلف انداز میں خراج عقیدت پیش کر رہے ہیں، ان کے چھیڑے سُروں کا سحرآج بھی سرچڑھ کر بول رہا ہے۔
استاد نصرت فتح علی خان عظیم پاکستانی قوال، موسیقار اور گلوگار تھے، وہ فیصل آباد میں قوالی سے تعلق رکھنے والے ایک گھرانے میں پیدا ہوئے، ان کے والد فتح علی خان اور تایا مبارک علی خان اپنے وقت کے مشہور قوال تھے۔
قوالی کے لیجنڈ نصرت فتح علی خان نے اپنی تمام عمر قوالی کے فن کو سیکھنے اور سیکھانے میں صرف کی، انہوں نے صوفیائے کرام کے پیغام کو دنیا کے ہر کونے تک پہنچایا اور اسی بنا پر ان کو خود بے پناہ شہرت نصیب ہوئی۔
نصرت فتح علی خان نے کلاسیکل موسیقی کو ایک نیا رنگ دیا، انہوں نے اس کو جدید میوزک کے منفرد انداز میں کچھ اس طرح پیش کیا کہ ان کے گانے ہر عمر کے لوگوں میں مقبول ہوگئے، اس کے بعد انہوں نے صوفی گلوکاری کو بھی نئے انداز سے بنا کر پیش کیا جس کے باعث ان کے گائے کلام نہ صرف پاکستان میں بلکہ امریکہ اور یورپ جیسے ممالک میں بھی سنے گئے۔انہوں نے کئی بین الاقوامی فلموں میں میوزک بھی دیا، 1995 میں ہالی ووڈ کی فلم ڈیڈ مین واکنگ میں ان کا ساونڈ ٹریک شامل تھا۔موسیقی کی دنیا میں نئے انداز اپنانے اور قوالی کو مشرق سے مغرب تک مقبول بنانے پر استاد نصرت فتح علی خان کو کئی اعزازت سے بھی نواز گیا، 1987 میں حکومت پاکستان کی جانب سے انہیں پرائیڈ آف پرفارمنس (تمغہ حسن کارکردگی) سے نواز گیا، پاکستان فلم انڈسٹری اور موسیقی کی دنیا میں کی گئی خدمات پر انہیں نگار ایواڑ سے بھی نوازا گیا، اس کے علاوہ ان کو یونیسکو کی جانب سے دیے جانے والے موسیقی کے انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا۔
استاد نصرت فتح علی خان کی قوالی ’دم مست قلندر علی علی‘ کو عالمی مقبولیت حاصل ہے اس قوالی کے منظر عام پر آتے ہی نصرت فتح علی خان کو کی عالمی شہرت میں کئی گنا اضافہ ہوا۔میری زندگی ہے تو، کسی دا یار نا بچھڑے، تم اک گورکھ دھندا ہو، یہ جو ہلکا ہلکا سرور ہے، دل لگی، اللہ ھو اور وہی خدا ہے سمیت کئی قوالیاں آج بھی لیجنڈری گلوکار کو زندہ کیے ہوئے ہیں۔استاد نصرت فتح علی خان 49 برس کی عمر میں 13 اکست 1997 کو دل کے دورے کے باعث دنیا بھر میں موجود اپنے مداحوں کو خیر آباد کہہ کر اپنے خالق حقیقی سے جا ملے تھے۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے