آصف زرداری کو ہسپتال منتقل کرنے کی درخواست مسترد

کسی بھی فرد جرم کے بغیر قید میرے والد ابھی تک طبی سہولیات کے منتظر ہیں،بلاول

ویب ڈیسک : 15اکتوبر2019
اسلام آباد: احتساب عدالت نے سابق صدر آصف علی زرداری کو علاج کے لیے اسپتال منتقل کرنے کی درخواست مسترد کردی ہے۔جج محمد بشیر نے گزشتہ روز تین صفحات پر مشتمل فیصلہ محفوظ کیا تھا جو آج جاری کیا گیا ہے۔
فیصلے کے مطابق عدالت کے پاس اسپتال کو سب جیل قرار دینے کا اختیار نہیں ہے۔فیصلے میں درج ہے کہ جیل حکام ایگزیکٹو آڈر کے ذریعے اسپتال کو سب جیل قرار دے سکتے ہیں لہذار ملزم کو متعلقہ پلیٹ فارم سے رجوع کرنا چاہیے۔
عدالت نے جیل سپریڈنٹ کو ہدایت کی ہے کہ سابق صدر کی میڈیکل رپورٹ کی روشنی میں اقدامات کر کے 22 اکتوبر تک رپورٹ پیش کی جائے۔
خیال رہے سابق صدر نے درخواست دی تھی کہ انہیں دل کا عارضہ لاحق ہے اور اگر دل کی تکلیف ہوئی تو انہیں فوری طور پر اسپتال نہیں پہنچایا جاسکےگا کیونکہ اڈیالہ جیل سے اسپتال تک کا فاصلہ ڈیڑھ گھنٹے میں طے ہوتا ہے۔
انہوں نے جیل میں آصف علی زرداری کو دو ذاتی اٹینڈنٹ رکھنے کی بھی درخواست کی تھی۔آخری سماعت پر وکیل لطیف کھوسہ نے عدالت میں موقف اپنایا کہ آصف زرداری کی جان کو خطرہ ہے، جیل میں طبی سہولیات ملنا آصف زرداری کا حق ہے، زرداری اس حکومت سے کچھ بھی نہیں لینا چاہتے لیکن جو قانونی حق ہے وہ دیا جائے۔
ادھرپاکستان پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہاہے کہ ریاست میرے والد کی گرتی صحت کو میری پارٹی پر دباؤ بڑھانے کے لئے استعمال کررہی ہے۔
سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اپنے بیان میں چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے کہا کہ اگست سے کسی بھی فرد جرم کے بغیر قید میرے والد ابھی تک طبی سہولیات کے منتظر ہیں ۔
بلاول بھٹوکہا کہ خود حکومت کے ماتحت سرکاری ڈاکٹروں نے صدر آصف علی زرداری کی خرابی صحت سے متعلق متعدد رپورٹس دیں،سرکاری ڈاکٹروں کی رپورٹس میں صدر زرداری کو جیل میں طبی سہولیات اور اسپتال منتقل کرنے کی سفارشات موجود ہیں۔چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی نے کہا کہ صدر زرداری کو طبی سہولیات نہ دے کر بنیادی انسانی حق سے ان کو محروم کیا جارہا ہے، نہ صرف انہیں اسپتال نہیں لے جایا گیا بلکہ فریج تک مہیا نہیں کیا گیا کہ وہ اپنی انسولین اور دیگر دوائیں رکھ سکیں۔
بلاول بھٹو زرداری نے خبردار کیا کہ اگر خدانخواستہ میرے والد کو کچھ ہوا تو میں اس حکومت کو ذمہ دار سمجھوں گا،ان تمام اوچھے حکومتی ہتھکنڈوں کے باوجود ہم اپنے اصول اور جمہوری جدوجہد پر سمجھوتہ نہیں کریں گے۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے