نئے آرڈیننس سے میڈیکل طالب علم پریشاں،داخلہ لینا مزید مشکل

اسلام آباد (ویب مانیٹرنگ) پاکستان میڈیکل کمیشن آرڈیننس 2019 کے نفاذ سے پرائیویٹ میڈیکل اور ڈینٹل کالجز کو غیرمعمولی اختیار تفویض ہوگئے، اب وہ اپنی مرضی سے فیس کا تعین کرسکیں گے ،انگریزی اخبارکے مطابق مذکورہ آرڈیننس کے تحت کالجز اضافی ٹیسٹ مثلاً انٹرویو میں امیدوار کو نمبر یا پوائنٹ دے سکیں گے ۔
آرڈیننس کی شق 19 کے مطابق میڈیکل یا ڈینٹل کالج میں داخلے کے لیے تمام امیدواروں کو میڈیکل اینڈ ڈینٹل کالج ایڈمیشن ٹیسٹ (ایم ڈی سی اے ٹی) پاس کرنا ہوگا اور یہ ملک بھر میں ایک ٹیسٹ ہوگا۔علاوہ ازیں نجی میڈیکل کالجز کا جن جامعات سے الحاق ہے وہ ان کی ہدایت پر اساتذہ کی بھرتی بھی کرسکیں گے۔ دوسری جانب یہ آرڈیننس سرکاری ہسپتالوں کی نجکاری کے خلاف سراپا احتجاج ڈاکٹروں سے سختی سے نمٹنے کی اجازت بھی دیتا ہے۔
معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے کہا کہ نیا آرڈیننس وقت کی ضرورت ہے اور طبی تعلیم سے منسلک تمام مسائل کا حل پیش کرتا ہے۔صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کی جانب سے آرڈیننس پردستخط کے ساتھ ہی پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل (پی ایم ڈی سی) تحلیل ہوگئی تھی اور اس کی جگہ پاکستان میڈیکل کمیشن نے لے لی تھی۔
پی ایم ڈی سی آرڈیننس 2019 کے عنوان سے ایک آرڈیننس نافذہوا ہے جس میں 17 رکنی کونسل کو میڈکل کالجز، ان سے منسلک ہسپتالوں اور ماہرین صحت کے مسائل کا تدارک کرنےکی ہدایت کی گئی تھی۔بعدازاں کونسل تشکیل دی گئی تھی اور 7 مارچ کو سینیٹ میں بل متعارف کرایا گیا تھا۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے