کورونا: عوام کو مکمل طور پر باخبر رکھا جائے، وزیراعظم

ویب ڈیسک : 31مارچ 2020
اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے ہدایت دی ہے کہ موجودہ صورتحال میں عوام کو ہر پہلو سے مکمل طورپرباخبررکھا جائے۔ انہوں نے سختی سے ہدایت کی کہ کسی بھی معاملے پر کوئی ابہام یا غلط فہمی کی صورتحال پیدا نہ ہو۔
انہوں نے یہ ہدایت اقتصادی پیکج اورنیشنل کوآرڈنی شن کمیٹی کے فیصلوں پرعملدرآمد کا جائزہ لینے کے لیے منعقدہ ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے دی۔
وزیراعظم عمران خان نے اعلیٰ سطحی اجلاس کے دوران کہا کہ ضلعی انتظامیہ اور رضا کاروں کے نیٹ ورک کے قیام کا مقصدعوام کوریلیف فراہم کرنا ہے۔انہوں نے سختی سے کہا کہ ریلیف کی فراہمی مکمل میرٹ پریقینی بنائی جائےگی۔ انہوں نے واضح کیا کہ ریلیف میں کسی قسم کی تفریق یا امتیازی سلوک کی شکایت برداشت نہیں کی جائےگی۔ اعلیٰ سطحی اجلاس کو چیئرمین این ڈی ایم اے لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ 13 مارچ تک ملک بھرمیں کورونا کی 14 لیبارٹریز موجود تھیں۔ انہوں نے کہا کہ آج 20 لیبارٹریاں مکمل طورپر فعال ہیں اورمزید 12 قائم کی جارہی ہیں۔چیئرمین این ڈی ایم اے کا کہنا تھا کہ بہت جلد 32 لیبارٹریوں کی موجودگی کا ٹارگٹ حاصل کر لیا جائے گا۔لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل نے اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ چین سے پہلی کھیپ میں 57 ہزارٹیسٹ کٹس منگوائی گئی تھیں اور بعد میں مزید 20 ہزاراور پھر 10 ہزارکٹس منگوائی گئی ہیں۔چیئرمین این ڈی ایم اے نے بتایا کہ مزید ایک لاکھ 92 ہزارٹیسٹ کٹس کل پاکستان پہنچ جائیں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ مجموعی طور پر تقریباً دو لاکھ 80 ہزارکٹس دستیاب ہوں گی۔اعلیٰ سطحی اجلاس کو مختلف صوبوں میں ٹیسٹ کٹس اور وینٹی لیٹرز سمیت دیگر ضروری طبی آلات کی دستیابی پر بھی تفصیلی بریفنگ دی گئی۔
اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سرکاری اسپتالوں کے ساتھ نجی اسپتالوں کو بھی اس بات کا پابند بنایا جائے گا کہ وہ بھی کورونا سے متعلقہ مریضوں کے لیے بیڈز کی ایک مخصوص شرح کو مختص کریں اوراس حوالے سے لازمی سہولتوں کی فراہمی یقینی بنائیں۔
وزیراعظم عمران خان نے اجلاس میں کہا کہ کورونا وائرس کی ٹیسٹنگ اوراس کی روک تھام سے متعلق دیگرممالک کے تجربات کا بھی بغورجائزہ لیا جارہا ہے۔انہوں نے ہدایت کی صوبوں سے کورونا سے متاثرہ مریضوں، اسپتالوں میں دسیتاب سہولتوں اور ٹیسٹنگ کٹس سے متعلق معلومات لے کر ڈیٹا اکھٹا کیا جائے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ وینٹی لیٹرزکی دستیابی سے متعلق ڈیٹا اکٹھا کرنے کا عمل بھی مزید منظم کیاجائے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس سلسلے میں صوبوں کے ساتھ کورآڈی نیشن کومزیدمستحکم بنایا جائے۔

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے